Search

غزوہ ہند، عمران نیازی اور فوج؟ کھریاں کھریاں۔۔۔راشد مراد ۔۔۔31/05/2020


کھریاں کھریاں کے قارئین نے کچھ سوالات بھیجے ہیں۔۔۔ٓاج کا کالم انہی سوالات کے جوابات پر مشتمل ہے۔

ایک سوال یہ پوچھا گیا ہے کہ اس خبر میں کتنی صداقت ہے کہ طالبان غزوہ ہند کرنے جا رہے ہیں اور اسی سوال کا دوسرا حصہ ہے کہ اگر غزوہ ہند طالبان نے ہی کرنا ہے تو پھر ہماری فوج کا کیا کردار ہے۔۔۔یہ جو اربوں روپے کا بجٹ ہر سال دفاع کے نام پر کھا جاتی ہے۔۔۔یہ اپنی جنگ خود کیوں نہیں لڑتی ؟


جواب دینے سے پہلے میں افکار علوی کا ایک شعر ٓاپ سب کی نذر کروں گا۔۔۔اس میں کافی حد تک ٓاپ کی اس بات کا جواب چھپا ہوا ہے کہ ہماری فوج کس کام کے لئے ہے۔۔۔شعرکچھ یوں ہے


مرشد ہماری فوج کیا لڑتی حریف سے

مرشد اسے تو ہم سے ہی فرصت نہیں ملی

رہی بات طالبان کے غزوہ ہند شروع کرنے کی تو مجھے تو اس میں کوئی صداقت نظر نہیں آتی۔۔۔جن لشکروں کو جرنیلی حکومت نے پچھلے کئی سال سے کشمیر میں جہاد کا ٹھیکہ دے رکھا ہے ۔۔۔اس وقت بین القوامی دباو کے تحت ان سب ٹھیکیداروں کو ہم نے پابند کیا ہوا ہے۔۔۔کوئی جیل میں ہے اور کوئی اپنے ٹریننگ کیمپ میں نظر بند ہے۔۔۔میری زاتی رائے میں تو یہ افواہ صرف کشمیر کے حوالے سے ایک نئی لولی پاپ ہے۔۔۔کشمیر کے لوگوں اور کشمیر سے ہمدردی رکھنے والے پاکستانیوں کو ٹھنڈا رکھنے کے لئے ایک شوشا چھوڑ دیا گیا ہے۔۔۔اب چونکہ پاکستانی جرنیل اس پوزیشن میں نہیں کہ کشمیر کی صورت حال پر کوئی عملی کاروائی کر سکیں اس لئے انہوں نے اپنی یہ زمہ داری بھی طالبان کے متھے لگانے کی کوشش کی ہے لیکن طالبان چاہے وہ افغانستان والے ہوں یا پاکستان والے ان میں سے کوئی بھی اس وقت اس موڈ میں نہیں ہے کہ وہ اپنے جہاد کو لے کر ہندوستان کا رخ کریں۔


دونوں کے پاس اپنے اپنے علاقوں میں بہت کچھ کرنے کو ہے اس لئے نہ وہ اس جھنڈے کے لے کر نکلیں گے اور نہ ہی وہ لشکر جن کی قیادت اس وقت جیلوں میں ہے۔۔۔رہی بات ہمارے جرنیلوں کی تو انہیں تو عمران نیازی نے اتنی زیادہ مالی مشکلات میں ڈال دیا ہے کہ اب انہیں اپنے جرنیلوں کو سرکاری محکموں میں نوکریاں دے کر کام چلانا پڑ رہا ہے۔۔۔اس لئے یہ غزوہ ہند صرف ان چینلز کے پروگراموں تک ہی محدود رہے گا جن میں لال ٹوپی والے جرنیلی تبصرہ نگار ایک عرصے سے لال قلعے کو فتح کر رہے ہیں۔

آج کا دوسرا سوال عمران نیازی کے بارے میں ہے اور پوچھا یہ گیا ہے کہ کیا عمران نیازی کی ناکام اور نااہل حکومت سے جرنیل ابھی تک بیزار کیوں نہیں ہوئے اور کیا وہ اسے پانچ سال کی مدت پوری کرنے دیں گے؟

بات دراصل یہ ہے کہ عمران نیازی کو لانے والے بھی اس سے تنگ آ چکے ہیں اور عمران نیازی بھی اپنے لانے والوں سے تنگ آ چکا ہے لیکن اب مسئلہ یہ ہے کہ عمران نیازی کے پاس اتنی طاقت نہیں ہے کہ وہ جنرل باجوہ کو فوج سے اس طرح نکال سکے جس طرح یہ اپنی پارٹی سے لوگوں کو استعمال کرنے کے بعد ٹشو پیپر کی طرح ڈسٹ بن میں پھینک دیتا ہے۔۔۔اسی طرح جنرل باجوہ کی یہ مجبوری ہے کہ اس کے پاس اسے ہٹانے کی طاقت تو ہے لیکن اسے اس بات کا خوف بھی ہے کہ کہیں عمران نیازی جاتے جاتے اس کی ایکسٹینشن والی فصل کو اجاڑ کر نہ رکھ دے۔


عمران نیازی کو گھر نہ بھیجنے کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ پاکستان کی کوئی بڑی سیاسی جماعت اس تنخواہ پر کام کرنے کو تیار نہیں ہے جس پر ان دنوں عمران نیازی کام کر رہا ہے۔۔۔آپ اپنے گھر والوں سے ہی دریافت کر لیں کہ وہ گھر میں جھاڑو لگانے والی اور برتن صاف کرنے والی ملازمہ کو نوکری سے نکالتے ہوئے کیا طریقہ کار اپناتے ہیں۔۔۔یقیننا آپ کے گھر والے کہیں گے کہ وہ ایسی ملازمہ کو نکالنے سے پہلے اس کے متبادل ملازم کا بندوبست کر کے اسے نکالیں گیں کیونکہ اگر انہوں نے اسے جذبات میں ٓا کر فارغ کر دیا تو پھر خاتون خانہ کو ملازمہ والے اضافی کام بھی کرنا پڑیں گے۔۔۔کچھ ایسی ہی صورت حال پاکستان کے اصلی حاکموں کی ہے۔۔۔ انہیں بھی جب تک عمران نیازی جونئیر نہیں مل جاتا وہ اسی طرح کام چلائیں گے۔

ویسے بھی اس وقت عمران نیازی ایک علامتی وزیر اعظم ہے۔۔۔اس کے ہر وزیر پر ایک فوجی فرشتہ نگرانی کے لئے بیٹھا ہوا ہے۔۔۔ساری پالیسیاں وردی والے بنا رہے ہیں۔۔۔ایسے میں اگر عمران نیازی کچھ ماہ اور بھی حکومت میں رہے تو اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔۔۔رہی بات پانچ سال پورے کرنے کی تو اس کا جواب یہ ہے کہ جب تک یہ کورونا والی جنگ چلتی رہے گی ۔۔۔عمران نیازی کی ایکسٹینشن ہوتی رہے گی۔


جس دن یہ جنگ باضابطہ طور پر ختم ہو گئی ۔۔۔پاکستان کی سیاسی جماعتیں اپنی نئی صف بندی کریں گی اور اس وقت اگر جنرل باجوہ نے اپنی سیاست کو فوج تک محدود کر لیا تو کسی حد تک صاف ستھرے انتخابات ہو سکتے ہیں اور ایک منتخب سیاسی حکومت بھی بن سکتی ہے ورنہ نیازی کی اپنی جماعت میں سے کم ازکم دو افراد اس وقت بھی شیروانی پہن کر ہر روز شیشے کے سامنے حلف لینے کی پریکٹس کر رہے ہیں۔۔۔ان میں سے کسی ایک کی لاٹری نکل آئے گی۔۔ ۔ اس کے علاوہ فوجی لیبارٹری میں ایک نیا روبوٹ تیار ہو رہا ہے اسے بھی سامنے لانے کی ٹرائی ہو سکتی ہے۔

631 views